تازہ ترین :
ٹوبہ ٹیک سنگھ پولیس کی پچھلے پانچ ماہ کی رپورٹ جاری کردی گئی،ضلعی پولیس شہریوں کے جان و مال کے تحفظ کیلئے پوری تندہی سے ڈیوٹی سر انجام دے رہی ہے : ڈی پی او عثمان اکرم گوندل ۔۔۔۔ ۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ : ریجنل پولیس آفیسر بلال صدیق کمیانہ کا ٹوبہ ٹیک سنگھ کا دورہ جرائم کی شرع اور امن و امان کی صورتحال کا جائزہ ۔۔۔۔ ۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ : نئی سبزی وپھل منڈی کے تعمیراتی کام کو رواں ماہ کے آخر تک معیار کے ساتھ پورا کیا جائے : ڈی سی معظم سپراء ۔۔۔۔ ۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ : ڈی سی معظم سپراء، ڈی پی او عثمان گوندل سمیت ضلعی افسران کے سستے رمضان بازاروں کے دورے ۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔ٹوبہ ٹیک سنگھ : بازاروں میں انکروچمنٹ ختم نے ہونے سے بازاروں میں خریداری کے لیے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ : شہر اور دیہات میں غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ میں اضافہ۔۔۔۔ ۔
Home » » کیا پاکستان پورن دیکھنے میں نمبر ون ہے؟

کیا پاکستان پورن دیکھنے میں نمبر ون ہے؟

Mian Saud IT Solutions نے شائع کیا 25/01/2015 | Sunday, January 25, 2015




سیکس یا تنازع ہمیشہ ہی بِکتا ہے۔ اسے پاکستان سے جوڑ دیں تو آپ کو ایک زبردست اسٹوری مل گئی۔

پاکستان کو ایک بار پھر شرارتی حرکتیں کرتے ہوئے پکڑنے کا دعویٰ کیا گیا۔ بار بار کی طرح ایک بار پھر مقامی اور عالمی نیوز ویب سائٹس نے رپورٹ کیا کہ ہمارا ملک انٹرنیٹ پر \'فحش مواد (پورن) سرچ کرنے میں سرِ فہرست ہے۔\'

اس خبر کی شہہ سرخی سے یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی تھی جیسے گوگل نے یہ معلومات ریلیز کی ہیں۔

جن لوگوں نے مقامی نیوز ویب سائٹس سے یہ خبر پڑھی، انہیں یہ معلوم ہوا کہ رپورٹ اصل میں حالاتِ حاضرہ کی ایک امریکی ویب سائٹ سیلون سے لی گئی ہے۔ اگر آپ سیلون کی اسٹوری پڑھیں، تو آپ کو معلوم ہو گا کہ یہ ایک اور لبرل بلاگ آلٹرنیٹ سے لی گئی ہے۔

آلٹرنیٹ پر شائع ہوئے اپنے بلاگ میں کیری وائسمین لکھتی ہیں کہ

\'گوگل کے ریلیز کردہ ڈیٹا کے مطابق پورن سرچ کرنے میں دنیا کے 8 سرفہرست ممالک میں سے 6 ریاستیں مسلم ہیں۔ پاکستان لسٹ میں پہلے نمبر پر ہے اور دوسرے نمبر پر مصر ہے۔ پھر ایران، مراکش، سعودی عرب، اور ترکی بالترتیب چوتھے، پانچویں، ساتویں، اور آٹھویں نمبر پر ہیں۔ پاکستان سوروں، گدھوں، کتوں، بلیوں، اور سانپوں کی پورن سرچ کرنے میں بھی سرِ فہرست ہے۔\'

لیکن کیری نے \'گوگل کے ریلیز کردہ ڈیٹا\' کا کوئی لِنک فراہم نہیں کیا ہے۔

گوگل کا رپورٹ کے بارے میں کیا کہنا ہے؟
کوئی بھی فرد جو ڈیجیٹل میڈیا میں کام کرتا ہے، چاہے بلاگر ہو، صحافی ہو، یا ایڈیٹر ہو، یہ جانتا ہے کہ گوگل شاید ہی کبھی کسی معاملے پر اپنا ڈیٹا ریلیز کرتا ہے۔ ہاں اس کا سرچ ڈیٹا اس کی مختلف ویب اینالائٹکس پراڈکٹس کی صورت میں دستیاب ہوتا ہے، جن میں سے سب سے زیادہ گوگل اینالائٹکس اور گوگل ٹرینڈز استعمال کیے جاتے ہیں۔

پھر وائسمین کو یہ ڈیٹا کہاں سے ملا؟

میرا اندازہ ہے کہ گوگل ٹرینڈز سے ملا ہوگا، لیکن میری بات کا یقین کیوں کیا جائے؟

ذیل میں گوگل کے ایک متعلقہ اہلکار کی ای میل درج کی جارہی ہے جو انہوں نے اسی موضوع پر کی تھی۔

\'گوگل نے پاکستان میں فحش سرچ پر کسی قسم کا کوئی بھی ڈیٹا ریلیز نہیں کیا ہے۔ اس لیے سیلون ڈاٹ کام کے مضمون میں جو بات کہی گئی ہے، وہ کسی آفیشل ذریعے سے نہیں لی گئی۔

\'یہ ہوسکتا ہے کہ ہمارے عام دستیاب ٹول گوگل ٹرینڈز کا غلط استعمال کیا گیا ہے۔ اس ٹول میں کوئی بھی شخص کوئی لفظ (سرچ ٹرم) ڈال کر دیکھ سکتا ہے کہ کون سے ممالک اس لفظ (ٹرم) کو سب سے زیادہ سرچ کرتے ہیں۔ مثال کے طور پر میں نے گوگل ٹرینڈز میں دیکھا کہ پاکستان دنیا میں کرکٹ سرچ کرنے والے ممالک میں سرِ فہرست ہے۔ آپ کرکٹ کو دیگر الفاظ سے تبدیل کر دیجیے، اور نتائج بھی تبدیل ہوجائیں گے۔

\'خلاصہ یہ کہ ٹرینڈز کا ڈیٹا اشارہ تو کر سکتا ہے، لیکن حقیقی نتائج نہیں دے سکتا۔ اس سے یہ نہیں ظاہر ہوتا کہ مواد وہاں موجود ہے، صرف یہ کہ لوگ کیا سرچ کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ کئی دیگر اعداد و شمار کو بھی نظر میں رکھنا چاہیے جیسے کہ ملک میں انٹرنیٹ صارفین کی تعداد، صنفی فرق، مقامی بول چال۔\'

یہ لیجیے۔

مزید واضح کرنے کے لیے
گوگل ٹرینڈز ایک بہت اچھا ٹول ہے، جو یہ بتاتا ہے کہ کسی بھی عرصے کے دوران کوئی لفظ کتنا زیادہ سرچ کیا جاتا رہا ہے۔ یہ کسی لفظ کی مقبولیت کو کسی محدود خطے کے حساب سے بھی پیش کر سکتا ہے۔ اس سے کچھ فوائد بھی حاصل کیے گئے ہیں جیسے کہ امریکا میں اس کا استعمال فلو سیزن کی پیشگوئی کے لیے کیا جاتا ہے۔

اس کے علاوہ اس کا استعمال دنیا میں پورن سرچ کرنے کے حوالے سے غلط معلومات پھیلانے کے لیے بھی کیا جاتا ہے۔

پورن کی مقبولیت پر شائع ہونے والی تمام خبریں اس بات کو بنیاد بناتی ہیں، کہ گوگل ٹرینڈز مکمل تحقیقی ڈیٹا فراہم کرتا ہے، جو کہ حقیقت نہیں ہے۔

گوگل ٹرینڈز کے ڈیٹا کو نارملائز کر دیا جاتا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ آپ جو رزلٹ دیکھتے ہیں، وہ سرچ کیے گئے لفظ کے تمام سرچ رزلٹس کو تمام سرچز سے تقسیم کر کے حاصل کیے جاتے ہیں۔

اس لیے گوگل ٹرینڈز کے نتائج گوگل کے مطابق \'اشارہ کرتے ہیں لیکن حقیقی نہیں۔\'

کیا گوگل ٹرینڈز لمحہ بہ لمحہ نتائج کے لیے بھی کار آمد ہے؟ اس بات پر اختلاف ہے۔

2011 ویلیزلی کالج نے امریکی کانگریس کے انتخابات کے حوالے سے گوگل سرچ ٹرینڈز کے ذریعے پیشگوئیوں پر ایک تحقیق کی، اور یہ پایا کہ سرچ کیے جانے والے ٹرم کی مقبولیت اور جیتنے کے امکانات میں کوئی مضبوط تعلق (strong correlation) موجود نہیں ہے۔

اور صرف تمام لوگوں پر واضح کرنے کے لیے: کیری وائسمین کی یہ \'معلومات\' گوگل اینالائٹکس سے بھی حاصل نہیں کی جا سکتیں۔

اصل بات یہ ہے کہ گوگل اینالائٹکس میں کسی بھی صارف کے پاس آپشن ہوتا تھا کہ وہ کسی بھی کی ورڈ یا سرچ ٹرم پر تحقیق کر سکے لیکن جب 2011 میں گوگل نے اپنی ٹریفک کو HTTPS کے ذریعے محفوظ کرنا شروع کیا تو کی ورڈز کا دستیاب ڈیٹا کم ہونے لگا۔ پھر 2013 میں اس فیچر کو آخرکار ختم کردیا گیا۔

اس لیے آلٹرنیٹ کا مضمون گوگل اینالائٹکس کے ڈیٹا پر مبنی نہیں ہے۔ کچھ لوگ کہہ سکتے ہیں کہ گوگل کی ورڈ ٹول اس کا متبادل ہے، لیکن کی ورڈ ٹول اصل میں صرف یہ بتاتا ہے کہ سرچ کیے جانے والے کسی بھی لفظ کی کوالٹی کتنی ہے، اور یہ ایڈورٹائزنگ کے لیے زیادہ مددگار ہے۔

گوگل ٹرینڈز کی مزید حدود
پورن سرچ کے اس پورے معاملے کے بارے میں جاننے کا سب سے بہتر طریقہ یہ ہے کہ خود گوگل ٹرینڈز کھولا جائے، اور پورن سے متعلق تمام الفاظ کے ٹرینڈز دیکھے جائیں۔ اگر پاکستان زیادہ تر الفاظ میں اوپر رہے، تو آپ کہہ سکتے ہیں کہ یہ مقبول ہے۔

لیکن آپ کسی ایک بھی لفظ کے بارے میں نہیں کہہ سکیں گے کہ آیا سرچ کی تعداد پاکستان میں دوسرے ممالک کے مقابلے میں زیادہ تھی یا کم۔


ذمہ دار صحافت کے بارے میں
2010 میں فوکس نیوز نے بھی ایک ایسی ہی خبر جاری کی تھی جس کے مطابق پاکستان پورن سرچ کرنے میں سرِ فہرست ہے۔ کچھ دن بعد ڈان نے ایک گوگل اہلکار کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا:

\'ہم وسیع سرچ پیٹرنز کے بارے میں درست ڈیٹا فراہم کرنے کی بھرپور کوشش کرتے ہیں، لیکن کسی بھی سرچ ٹرم کے نتائج، جیسے کہ پاکستان سے اس اسٹوری میں رپورٹ کیا گیا ہے، میں غلطیاں ہوسکتیں ہیں کیونکہ سیمپل سائز رزلٹس کے شماریاتی حساب سے درست ہونے کے لیے بہت چھوٹا ہے۔\'

صحافیوں کے لیے سبق یہ ہے کہ گوگل ٹرینڈز استعمال کرنے میں کوئی حرج نہیں، لیکن اس کا ڈیٹا استعمال کر کے غلط فہمیاں پھیلانا کسی بھی صورت میں درست نہیں۔

اس بارے میں دیانت داری سے یہ کہا جانا چاہیے کہ پاکستانیوں کو یہ سب پسند ہے۔ ہم اسے گوگل ٹرینڈز پر دیکھ سکتے ہیں۔ لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ ہم اسے ثابت نہیں کر سکتے۔ اور یہ تو بالکل بھی نہیں کہہ سکتے کہ ہم اس میں دنیا بھر سے آگے ہیں۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ سیلون اور آلٹرنیٹ پر موجود اسٹوریز کو غلط معلومات پھیلانے کا ملزم نہیں ٹھہرایا جاسکتا۔ وہ پورن میں دلچسپی کے ٹرینڈ کے علاوہ کچھ بھی رپورٹ نہیں کر رہے۔ ہاں ہمارے مقامی اخبارات اور ویب سائٹس پر شائع ہونے والی خبریں الگ کہانی ہیں۔

غلط معلومات کے اس دور میں غلط معلومات ہر جگہ رہیں گے۔ بہتر ہے کہ سنسنی سے دور رہا جائے۔ ہمیشہ ایسے مضامین موجود ہوں گے جن کی شہہ سرخیاں لوگوں کو کلک کرنے پر مجبور کریں گی، اور ایسی خبریں ہوں گی جو متنازع چیزوں کو اپنے فائدے کے لیے استعمال کریں گی۔

صحافیوں کی طرح ذمہ داری پڑھنے والوں پر بھی ہے۔ پڑھنے والوں کو یہ ذمہ داری اٹھانی ہوگی۔
Share this article :

Google ads

اصلاح پروگرام

اصلاح پروگرام

ٹوبہ نیوز

ٹوبہ نیوز

ہم سے رابطہ کریں

Name

Email *

Message *

مقبول خبریں

 
Company Info | Contact Us | Privacy policy | Term of use | Widget | Advertise with Us | Site map
Copyright © 2011. TOBA NEWS . All Rights Reserved.
Design Template by Saud Ahmed | Support by creating website | Powered by Blogger